غزل ۔۔۔ ثروت زہرا


غزل

( ثروت زہرا )

غم کے آوے میں جو آتِش نہ جَلے ‘ تب کیا ہو
حرفِ نا پُختہ پڑا ہاتھ مَلے ‘ اب کیا ہو

میری پلکوں کے تلے چشمِ تماشا رقصاں
ھُــو کی یلغار میں گُم ہو گئی ۔۔ تو رب کیا ہو

میرے آغاز سے انجام تلک تُو ہی تُو
موڑ کیوں ‘ منزِلیں کیوں ‘ اُور کوئی ڈھب کیا ہو

جلتی باتی میں جَلے تاگ کی اب بَھســم ہوں مَیں 
موم کے جسم کو انجام مِلے ‘ اب کیا ہو

نامیاتی کسی ترکیب سے نکلا ہُوا دن
سارے انداز سیاہی میں دُھلے ‘ شب کیا ہو

ا

Share your Thoughts:

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Show Buttons
Hide Buttons
%d bloggers like this: