غزل ۔۔۔ شہلا شہناز

shehla-shahnaz-poetry-kisi-titli-ki

غزل

(شہلا شہناز)

 

کسی تتلی کی طرح اِذن ِ رسائی دیتی

کبھی چھپ جاتی کبھی تجھ کو دکھائی دیتی

میں تو اب خودکو بھی معتوب نظر آنے لگی

عشق کے باب میں کیا اپنی صفائی دیتی

ایسی بھی تو میری بے جان نہیں تھی آواز

دل سے سنتا تو میری چپ بھی سنائی دیتی

یہ جو آسانی سے آتی نہیں قرطاس پہ میں

کچھ سہولت تو مجھے حرف نمائی دیتی

اپنی منزل کے تصور میں مجھے سوچتا تو

اور میں رستے کی طرح تجھ کو رسائی دیتی

Share your Thoughts:

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Show Buttons
Hide Buttons
%d bloggers like this: