Pic24-017 ISLAMABAD: Dec24 – People are gathered around the fire to keep themselves warm during the cold weather in federal capital. ONLINE PHOTO by Waseem Khan

ہم ۔۔۔ شعیب کیانی

“بم”

شعیب کیانی

کوئی کتنی مشقت سے پیدا ہوا

ایک قطرے کو گبرو جواں کرتے کرتے

کسی کے بدن کا لہو لگ گیا

یا کوئی نیزہ قامت کماں بن گیا

بم نہیں سوچتا

اک جواں ہاتھ میں پکڑے سی وی سے لف

اعلیٰ تعلیمی ڈگری کے کاغذ پہ

کنبے کی تقدیر ہے

ایک بس میں نفاست سے چلتی ہوئی ہوسٹس

کے قرینے سے رکھے ہوئے

اجلے پیروں میں آٹے کی زنجیر ہے

بم نہیں دیکھتا

کوئی پنڈت ہے، فادر ہے، ملّاں ہے

یا کوئی پہنچا ہوا پیر ہے

بم نہیں پوچھتا

کوئی زم زم سے دھویا ہوا ہے یا گنگا نہایا ہوا

بم نہیں سونگھتا

بم کو پہنے ہوئے

خوبرُو نوجوانوں کی آنکھوں میں

جو سبز باغوں کا نقشہ ہے۔۔۔ وہ باغ ہیں۔

بم نہیں مانتا

بم جو پھٹتا ہے تو مسجدوں، مندروں،

کوٹھیوں، گاڑیوں، گھونسلوں،

چھوٹے بچوں، بزرگوں، خرد مند ذہنوں

اور احمق دماغوں کو کھا جاتا ہے

بم پہ حیرت نہیں

بم سے شکوہ نہیں

بم کی آنکھیں نہیں

بم تو بے جان ہے

مجھ کو حیرت ہے تو بس اسی بات پر

بم پہ اترانے والا تو انسان ہے

وہ نہیں سوچتا۔۔۔

کیوں نہیں سوچتا؟

Facebook Comments Box

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Calendar

February 2024
M T W T F S S
 1234
567891011
12131415161718
19202122232425
26272829