غزل ۔۔۔ غلام محمد قاصر

غزل


(غلام محمد قاصر)

جَگمگاتے خوف کا ہر اِک نِشاں راہوں میں ہے
آگ منزل میں لگی ہے اور دُھواں راہوں میں ہے

ہیں ابھی دَشتِ طَلب پر جسم و جاں سایہ فگن
اِک زمیں راہوں میں ہے، اِک آسماں راہوں میں ہے

فتح کے فرماں رَقم کرتی رہے گی خوُد ہَوا
کیوں ٹھہرتے ہو اگر ریگِ رَواں راہوں میں ہے

دَستکوں کے سُرخ پتّھر، آہٹوں کے زرد پُھول
گھر میں بھی ہے رَتجگوں کا جو سَماں راہوں میں ہے

آنکھ سے آنسُو رَواں ہیں رُوئے جاناں پر نظر
قافلہ سالار پہنچا، کارواں راہوں میں ہے

ڈھُونڈ لیں گے گُلستاں کو ظُلمتوں کے سِلسلے
جَلتے بُجھتے جُگنوؤں کی کہکشاں راہوں میں ہے

Share your Thoughts:

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Show Buttons
Hide Buttons
%d bloggers like this: