نظریہ ء ارتقا ء ۔۔ چند سوالات۔۔ میثم عباس علیزی

نظریہ ارتقاء

Evolution

میثم عباس علیزی

سوال نمبر 01:

نظریہ ارتقاء کے مطابق انسان بندروں سے ارتقا پذیر ہوا ہے اور یہ کہ انسان بندر کی اولاد ہے ؟

جواب:

ڈارون کے نظریہ ارتقاء کے مطابق انسان بندر کی اولاد نہیں اور نہ ہی یہ کہ انسان بندر سے ارتقاء پذیر ہوا ہے بلکہ نظریہ ارتقاء ہمیں یہ وضاحت فراہم کرتی ہے کہ کس طرح سے قدرتی انتخاب یعنی (natural selection) کے ذریعے وقت کے ساتھ ساتھ انواع (species) میں تبدیلی آتی ہیں اور نظریہ ارتقاء کے مطابق انسان اور بندر ایک ہی آبا و آجداد سے ہیں۔ یعنی تمام جاندار بشمول انسان اور بندر ایک مشترکہ نسب رکھتے ہیں اور قدرتی انتخاب کے عمل کے ذریعے وقت کے ساتھ ساتھ ارتقا پذیر ہوئے ہیں۔

سوال نمبر 02:

قدرتی انتخاب (natural selection) کا مطلب کیا ہیں؟

جواب:

قدرتی انتخاب ایک ایسا عمل ہے جو جانداروں کی ان خصلتوں کو پسند کرتے ہوئے اپنے ماحول کے مطابق ڈھالنے میں مدد کرتا ہے جو ان کے زندہ رہنے اور تولید (reproduction) کے امکانات کو بڑھاتی ہیں۔

مثال کے طور پر آپ تصور کریں کہ ایک جنگل میں خرگوشوں کا ایک گروہ رہتا ہیں۔ کچھ خرگوش دوسروں کے مقابلے میں تیز ہو سکتے ہیں اور کچھ کی کھال ہو سکتی ہے جو درختوں اور جھاڑیوں کے ساتھ اچھی طرح مل جاتی ہے۔ اب ظاہر ہے وحشی جانوروں جیسے بھیڑے سے بچنے کے امکانات تیز رفتار خرگوش اور بہتر چھلاورن کے ساتھ بھیڑے سے بچنے کے امکانات زیادہ ہونگے۔

یعنی سست خرگوش اور کم موثر چھلاورن والوں میں پکڑے جانے کے امکانات زیادہ ہوتے ہیں۔

اس کا مطلب یہ ہے کہ تیز رفتار اور بہتر چھلاوے والے خرگوشوں کے زندہ رہنے اور بچے پیدا کرنے کے امکانات زیادہ ہوتے ہیں، وہ اپنے جینز (genes) کو رفتار اور اچھی چھلاورن کے لئے اپنی اولاد میں منتقل کریں گے اور یہی نیچرل سیلکشن ہے۔

یا ایک اور مثال سے سمجھنے کی کوشش کرتے ہیں جیسے  زرافے کی مثال لیتے ہے، وقت گزرنے کے ساتھ، لمبی گردن والے زرافے درختوں میں خوراک کے ذرائع تک پہنچنے میں بہتر طور پر کامیاب ہوگئے تھے، جس سے انہیں اپنی چھوٹی گردن والے ہم جنسوں پر ایک اضافی فائدہ ملتا تھا۔ نتیجے کے طور پر، ان کے زندہ رہنے اور دوبارہ پیدا ہونے کا زیادہ امکان تھا، ان کے لمبی گردن والے جین (genes) اگلی نسل میں منتقل ہوتے تھے۔ وقت گزرنے کے ساتھ، یہ  صورتحال زرافے کی لمبی گردن کے ارتقاء کا باعث بنی، جو کہ اب مخصوص نوع کی ایک مشہور خصوصیت ہیں۔

سوال نمبر 03:

کیا قدرتی انتخاب کا تصور یہ ظاہر نہیں کرتا ہے کہ زندگی کی کچھ شکلیں یا کچھ انواع (species) فطری طور پر دوسروں سے برتر ہیں یعنی ایک دوسرے پر فوقیت رکھتی ہیں ؟

جواب:

جی نہیں، ضروری نہیں ہے۔ قدرتی انتخاب ان خصلتوں کی حمایت کرتا ہے جو کسی حیاتیات کو ایک خاص ماحول میں زندہ رہنے اور دوبارہ پیدا کرنے میں مدد کرتے ہیں لیکن اس کا یہ مطلب نہیں ہے کہ ایک زندگی کی شکل فطری طور پر دوسری سے بہتر ہے۔ زندگی کی ہر شکل کی اپنی منفرد طاقتیں اور کمزوریاں ہوتی ہیں اور ہر ایک قدرتی دنیا کے تنوع میں اپنا حصہ ڈالتا ہے۔

سوال نمبر 04:

قدرتی انتخاب (natural selection) کا  یہ تصور زمین پر زندگی کی شکلوں کی پیچیدگی (Complexities) اور تنوع (Diversity) کی وضاحت کیسے کرتا ہے ؟

جواب:

اصل میں، قدرتی انتخاب کا تصور ہمیں یہ سمجھنے میں مدد کرتا ہے کہ زمین پر زندگی کی شکلوں کی پیچیدگی اور تنوع وقت کے ساتھ کس طرح تیار ہوئے ہیں۔ قدرتی انتخاب ایک ایسا عمل ہے جو ان خصلتوں کی حمایت کرتا ہے جو حیاتیات کو کسی خاص ماحول میں زندہ رہنے اور دوبارہ پیدا کرنے میں مدد کرتے ہیں۔ وقت گزرنے کے ساتھ یہ فائدہ مند خصلتیں آبادی میں زیادہ عام ہو جاتی ہیں، جس سے نئی نسلوں کی نشوونما اور زندگی کی شکلوں میں تنوع پیدا ہوتا ہے۔

 مثال کے طور پر ایک جزیرے پر رہنے والے پرندوں کے گروپ کو تصور کریں۔ کچھ پرندوں کی چونچ لمبی ہوتی ہیں، جبکہ کچھ کی چونچ چھوٹی ہوتی ہیں۔ اگر اس جزیرے پر پرندے زمین میں گہرائی میں دبے ہوئے بیجوں کو کھاتے ہیں تو لمبی چونچ والے پرندے کے زندہ رہنے اور دوبارہ پیدا ہونے کے امکانات زیادہ ہوتے ہیں کیونکہ وہ بیج تک پہنچنے کے قابل ہوتے ہیں۔ نتیجے کے طور پر، اس جزیرے پر پرندوں کی آبادی میں لمبی چونچوں والے پرندوں کا غلبہ ہو جاتاہے۔ کئی نسلوں کے دوران، ان پرندوں کی چونچیں تیار ہوتی رہتی ہیں اور اس سے بھی لمبی ہو سکتی ہیں، بالکل اس ماحول کے مطابق جس میں وہ رہتے ہیں ۔

سوال نمبر 05:

کیا ڈارون کا نظریہ ارتقاء محض ایک تھیری (Theory) کی حیثیت نہیں رکھتی ؟ اور تھیری کسی مسلَّم قانون کی حیثیت نہیں رکھتی۔

جواب:

اگرچہ قدرتی انتخاب کے ذریعے ارتقاء کو ایک تھیری کی حیثیت حاصل ہے لیکن اس کا یہ مطلب نہیں کہ یہ قیمتی یا مفید نہیں ہے۔ سائنس کی دنیا میں تھیری مشاہدہ شدہ حقائق کے مجموعے کے لئے ایک وضاحت ہے جس کا بار بار تجربہ کیا گیا ہیں اور ثبوت کے ذریعے اس کی تائید کی گئی ہے۔ ارتقاء کی تھیری کا وسیع پیمانے پر تجربہ کیا گیا ہے اور مطالعہ کے بہت سے مختلف شعبوں کے شواہد سے اس کی تائید کی گئی ہیں، جیسے جینیات (genetics) اور (paleontology) کے شعبوں میں باقاعدہ ارتقاء ثابت ہوئی ہے۔ ڈارون کے قدرتی انتخاب کے ذریعے کا مقصد کسی کے عقائد کو بدلنا یا اس سے تصادم پیدا کرنا نہیں تھا بلکہ یہ ایک سائنسی وضاحت ہے کہ زمین پر زندگی کی شکلیں وقت کے ساتھ ساتھ کس طرح پروان چڑھی اور متنوع ہوئیں۔ یہ اس فطری عمل کو سمجھنے کی کوشش کرتا ہے جو سائنسی تحقیقات کے ذریعے جمع کیا گیا ہے۔

ایک سائنسدان کا کام یہ ہوتا ہے کہ قدرتی دنیا کو ایسے سمجھے جیسے کہ وہ ہیںہیں اور ایک مستند سائنسدان کی یہ کوشش ہوتی ہے کہ شواہد اور بار بار تجربات کی بنیاد پر وضاحتیں فراہم کریں۔ ارتقاء کا ارتقاء کسی خدائی خالق کے وجود یا فطرت کی وضاحت کرنے کی کوشش نہیں کرتا اور نہ ہی کسی کے امکان کی نفی کرتا ہے۔ یہ ایک سائنسی نظریہ ہے جو ہمیں ان فطری اعمال کو سمجھنے میں مدد فراہم کرتا ہے جنہوں نے زمین پر زندگی کی نشوونما میں اہم کردار ادا کیا ہے۔

سوال نمبر 06:

ڈارون کا نظریہ ارتقاء کا فائدہ کیا ہیں اور یہ عملی زندگی میں ہماری کیا مدد کرسکتا ہے ؟

جواب:

 ارتقاء کی بابت کام کے بہت سے عملی اطلاقات ہیں جنہوں نے متعدد طریقوں سے زندگی کو سمجھنے اور بہتر بنانے میں ہماری مدد کی ہیں جیسے؛

1) ادویات (medicines):

ارتقاء کی صحیح سمجھ بیماریوں کے لئے نئی دوائیں اور علاج تیار کرنے میں ہماری مدد کرتی ہیں۔ یہ سمجھنے سے کہ بیکٹیریا اور وائرس کیسے تیار ہوتے ہیں اور اینٹی بائیوٹکس کے خلاف مزاحم بنتے ہیں، ہم نئے علاج تیار کر سکتے ہیں جو ان پیتھوجینز کا مقابلہ کرنے میں زیادہ موثر ہیں۔

2) زراعت (Agriculture)

ارتقاء کے کام نے فصلوں کی نئی اقسام تیار کرنے میں ہماری مدد کی ہے جو کیڑوں اور بیماریوں کے خلاف مزاحم ہیں۔ یہ سمجھ کر کہ پودوں کی انواع کس طرح تیار ہوتی ہیں اور اپنے ماحول سے مطابقت رکھتی ہیں، ہم فصل کی نئی قسمیں تیار کر سکتے ہیں جو کہ مخصوص بڑھتے ہوئے حالات کے لیے بہتر طور پر موزوں ہیں۔

3) تحفظ (Conservation):

نظریہ ارتقاء نے ہمیں حیاتیاتی تنوع کی اہمیت اور ماحولیاتی نظام میں مختلف انواع کے باہمی ربط کو سمجھنے میں مدد کی ہے۔ اس بات کا مطالعہ کرنے سے کہ مختلف انواع و جاندار کی نشوونما کیسے ہوتی ہے اور ایک دوسرے کے ساتھ کیسے تعامل کرتے ہیں، ہم تحفظ کی حکمت عملی تیار کر سکتے ہیں جو خطرے سے دوچار انواع اور جانداروں کے تحفظ اور قدرتی رہائش گاہوں کو محفوظ رکھنے میں مدد کرتے ہیں۔

4) فرانزک سائنس (Forensic science):

اور سب سے ضروری یہ کہ نظریہ ارتقاء نے ڈی این اے کا تجزیہ کرنے اور ان کے جینیاتی مواد سے افراد کی شناخت کے لئے نئے طریقے تیار کرنے میں ہماری مدد کی ہے۔ یہ سمجھنے سے کہ ڈی این اے کس طرح تیار ہوتا ہے اور وقت کے ساتھ تبدیل ہوتا ہے، ہم فرانزک تجزیہ کے لئے زیادہ درست اور قابل اعتماد طریقے تیار کر سکتے ہیں۔

لہذا زمین پر زندگی کے تنوع کو تشکیل دینے والے قدرتی عمل کو سمجھ کر، ہم نئی ٹیکنالوجیز اور حکمت عملی تیار کر سکتے ہیں جو صحت منداور زیادہ پائیدار زندگی گزارنے میں ہماری مدد کرتی ہیں۔

سوال نمبر 07:

نظریہ ارتقاء زندگی کی ابتدا کی وضاحت کیسے کرتا ہے؟

ڈارون کا نظریہ ارتقاء کا کام زندگی کی ابتداء کی وضاحت کرنا نہیں ہے بلکہ یہ ہے کہ قدرتی انتخاب یعنی (natural selection) کے ذریعے جانداروں کی شکلیں وقت کے ساتھ ساتھ کس طرح تبدیل ہوئیں۔

سوال نمبر 08:

کیا نظریہ ارتقاء نے انسان کو ایک جانور کی حیثیت نہیں دی اور اور یہ کہ انسانوں کو اب آخلاقیات کی کیا ضرورت اگر انسانوں کی حقیقت یہ ہے؟

جواب:

یہ واقعی ایک غلط فہمی ہے لیکن ڈارون نے خود انسانی معاشروں میں اخلاقیات اور اخلاقیات کی اہمیت کو تسلیم کیا ہے اور انہوں نے اپنی بعد کی تصانیف میں اس موضوع پر تفصیل سے لکھا ہیں۔ ڈارون نے درحقیقت یہ دلیل دی ہے کہ انسانوں نے اخلاقی اور اخلاقی رویے کی صلاحیت کو تیار کیا ہیں اور یہ کہ ان خصلتوں نے ایک نسل کے طور پر ہماری کامیابی میں اہم کردار ادا کیا ہیں۔ اگرچہ کچھ لوگ نظریہ ارتقاء کی یہ تشریح کر سکتے ہیں کہ انسان دوسرے جانور ہی کی طرح ہے لیکن اس کا یہ مطلب ہرگز نہیں کہ ہمیں اپنے اخلاقی اصولوں کو ترک کر دینا چاہئیے۔ بلکہ ہمیں قدرتی دنیا میں اپنے مقام کو سمجھنے کی کوشش کرنی چاہیئے جو ہم نے بہت مشقت کی بعد حاصل کیا ہیں اور ہمیں انسانوں اور غیر انسانی جانوروں سمیت تمام جانداروں کی فلاح و بہبود کے لئے کام کرنا چاہیئے۔

تحریر: میثم عباس علیزی

Facebook Comments Box

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Calendar

June 2024
M T W T F S S
 12
3456789
10111213141516
17181920212223
24252627282930