Day: November 30, 2019

مُردوں کی دعوت ۔۔۔ پُشکن

November 30, 2019

مُردوں کی دعوت ( الیگسانڈر پشکن ) آدریان پروخوروف Adrian Prokhoroff کے گھر کا سارا سازوسامان جنازہ لے جانے والی گاڑی پر لدچکا تھا۔ مریل گھوڑے چوتھی دفعہ بسمانیا  Basmannaiaسے نکتسکا Nikitskaiaیا سڑک کی طرف چلے جہاں اس نے نیا مکان خریدا تھا۔ تابوت ساز نے دکان مقفل کر باہر دروازہ پر اس اعلان کی […]

Read More

گوالن ۔۔۔ خالدہ حسین

November 30, 2019

گوالن ( خالدہ حسین ) ایک تھا بادشاہ، ہمارا تمہارا خدا بادشاہ۔ اس کے راج میں چاروں کھونٹ امن و امان، کوئی مسئلہ نہ مشکل۔ کوئی دشمن نہ حریف، مانو شیر بکری ایک گھاٹ پانی پیتے تھے۔ پس بادشاہ کا زیادہ وقت سیر و شکار میں گزرتا۔ کرنا خدا کا کیا ہوا کہ ایک روز […]

Read More

غزل ۔۔۔ عدیم ہاشمی

November 30, 2019

غزل ( عدیم ہاشمی ) کس حوالے سے مجھے کس کا پتا یاد آیا حسنِ کافر کو جو دیکھا تو خدا یاد آیا ایک ٹوٹا ہوا پیمانِ وفا یاد آیا یاد آیا بھی مجھے آج تو کیا یاد آیا شام کے ہاتھ نے جس وقت لگا لی مہندی مجھے اس وقت ترا رنگِ حنا یاد […]

Read More

غزل ۔۔۔ غلام محمد قاصر

November 30, 2019

غزل (غلام محمد قاصر) جَگمگاتے خوف کا ہر اِک نِشاں راہوں میں ہے آگ منزل میں لگی ہے اور دُھواں راہوں میں ہے ہیں ابھی دَشتِ طَلب پر جسم و جاں سایہ فگن اِک زمیں راہوں میں ہے، اِک آسماں راہوں میں ہے فتح کے فرماں رَقم کرتی رہے گی خوُد ہَوا کیوں ٹھہرتے ہو […]

Read More

شاہی حکیم۔۔۔ نادر علی

November 30, 2019

شاہی حکیم ( نادر علی ) حکیم اللہ بخش اک شاہی حکیم ہویا اے ۔ بابے اکبر اُسدی حکمت دے قصے سُنائے۔ ہر گل ظاہرا انہونی کہانی سہی ہوندی اے۔ پرسوچو تے وچ رمز چُھپی پئی اے۔ اکھے بادشاہماندہ پے گیا تے کوئی مرض دی سمجھ نہ آوے ۔ سو علاج کیتے ۔ جادُو ٹُونے […]

Read More

اے ہسٹری آف گاڈ(تبصرہ) ۔۔۔ راشد جاوید احمد

November 30, 2019

خدا کی تاریخ کیرن آرمسٹرانگ تبصرہ کار:: راشد جاوید احمد کیرن آرمسٹرانگ ایک عالمی شہرت یافتہ مصنفہ ہیں۔ برطانیہ میں ویسٹ مڈلینڈ کے علاقے ووسٹرشائر میں 14 نومبر 1944 کو پیدا ہوئیں۔ کیرن آرم سٹرانگ نے اپنی زندگی کے سترہ سال بطور رومن کیتھولک نن بسر کیے، 1969ء میں اپنے مذہبی سلسلے کو چھوڑنے کے […]

Read More

پھول سنگ سبزگی،صبا بھیجو ۔۔۔ فرح خاں

November 30, 2019

نظم ( فرح خان )  ·  پھول، سنگ , سبزگی , صبا بھیجو حبس ہے , سرمئی ردا بھیجو اب تو جینا محال ہے میرا لادوا ہو چکی , دوا بھیجو درد کا اندمال ہو شاید تم ذرا اپنی خاکِ پا بھیجو چوم کر آنکھ سے لگا لوں گی تم ہوا ہاتھ جب قبا بھیجو […]

Read More

انکار ۔۔۔ گلنار فیروز خان

November 30, 2019

انکار ( گلنار فیروز خان) کیا یہ کم ہے؟  کہ میں نے تمھارے لئے اپنی وہ زندگی ترک کی  جس کو گزارنے کے میں نے خواب سجائے تھے  میں نے خوشیوں کا گلہ گھونٹ دیا  اور رشتے کے اثبات میں سر ہلایا  میں نے بنا دیکھے تم کو قبول کیا  تمہیں معلوم ہے  میں فکشن […]

Read More
Show Buttons
Hide Buttons
%d bloggers like this: